بی جے پی کے ساتھ حکومت بنانے والے نتیش کمار کی مخالفت کرنے والے شرد یادو کے خلاف ہوئی بڑی کارروائی راجیہ سبھا میں JDU لیڈر کے عہدے سے ہوئی شرد یادو کی چھٹی، پارٹی سے بھی ہو سکتے ہیں باہر

نئی دہلی: (ملت ٹائمز)  بہار میں مہاگٹھ بدھن ٹوٹنے کے بعد سے سیاسی ہلچل مسلسل تیز ہو رہی ہے. ابھی جے ڈی یو کے بغاوتی لیڈر شرد یادو کی راجیہ سبھا میں جے ڈی یو لیڈر کے عہدے سے چھوٹٹي ہو گئی ہے، ان کی جگہ اب آرسي پي سنگھ راجیہ سبھا میں جے ڈی یو پارلیمانی پارٹی کے لیڈر ہوں گے۔۔

کل نو ممبران پارلیمنٹ نے شرد یادو کی پارٹی مخالف سرگرمیوں کی شکایت کی تھی. اب خبر ہے کہ جے ڈی یو کبھی بھی شرد یادو کو پارٹی سے باہر کا راستہ دکھا سکتا ہے۔ دراصل شرد یادو نتیش کمار کی طرف سے بہار میں آر جے ڈی کا ساتھ چھوڑنے اور بی جے پی کے ساتھ ناطہ جوڑنے جانے کے خلاف ہیں۔

حال ہی میں بہار کے دورے پر گئے شرد یادو نے نتیش پر نشانہ لگایا تھا، انہوں نے کہا تھا، ” بی جے پی کے ساتھ جا کر انہوں نے عوام کے ساتھ صدمے کیا ہے، 11 کروڑ عوام کے ساتھ صدمے کیا ہے. چوٹ لگی ہے، یہاں کچھ نہیں بولیں گے. تمام چیزیں عوام کے درمیان ہوگی. ہم نے جو عوام سے معاہدہ کیا تھا وہ ٹوٹا ہے، ہم کو بھی تکلیف ہے۔ ”

شرد یادو کوئی بھی فیصلہ لینے کے لئے آزاد – نتیش

نتیش کمار نے یادو کے ساتھ میل ملاپ کے سارے دروازے تقریباً بند کرتے ہوئے کہا کہ وہ کوئی بھی فیصلہ لینے کے لئے آزاد ہیں۔ بی جے پی کے ساتھ اتحاد کرنے کا فیصلہ پارٹی کا تھا۔
نتیش نے کہا، “شرد یادو کوئی بھی فیصلہ لینے کے لئے آزاد ہیں، جہاں تک پارٹی کا سوال ہے تو یہ پہلے ہی فیصلہ کر چکی ہے. یہ صرف میرا فیصلہ نہیں تھا بلکہ پوری پارٹی کی مرضی سے یہ فیصلہ کیا گیا۔ اگر وہ مختلف خیال رکھتے ہیں تو وہ ایسا کرنے کے لئے آزاد ہیں۔ “

Related posts

1 Comment

Leave a Reply

Your email address will not be published.