طلاق بل پر ہوئی ترمیم کے بعض اجزاءسے خواتین مسلم پرسنل لاءبورڈ کا اختلاف ، پہلی فرصت میں ایف آئی درج نہ کرنے کی اپیل

اگر پہلی فرصت میں ایف آئی آر درج ہوجاتی ہے تو پھر صلح سمجھوتہ اور کاﺅنسلنگ کا موقع نہیں مل پائے گا اور اس سے خاندان ٹوٹ جائے گا جبکہ خواتین مسلم پرسنل لاءبورڈ کی کوشش یہ ہوتی ہے کہ خاندان نہ بکھرے رشتہ برقرار رہے

لکھنو نئی دہلی (ملت ٹائمز عامر ظفر )
طلاق بل میں مرکزی کابینہ کی جانب سے کئی گئی تین ترمیمات کے سلسلے میں خواتین مسلم پرسنل لاءبورڈ کی صدر محترمہ شائستہ عبنر نے ایک ویڈیو جاری کرکے اپنا یہ ردعمل ظاہر کیاہے کہ یہ ترمیم صحیح ہے کہ مجسٹریٹ بیوی کے کہنے پر صلح سمجھوتہ کا موقع دیں گے شوہر کو ضمانت پر ہار کردیاگیا جائے گا لیکن پہلی فرصت میں ایف آئی آردرج نہیں ہونی چاہیئے ۔انہوں نے کہاکہ سپریم کورٹ کے مطابق تین طلاق غیر قانونی اور بین ہے تو یہ صحیح ہے لیکن اگر متاثرہ بیوی یا اس کے رشتہ دار ایف آئی آر درج کرانے تھانہ یا عدالت میں پہونچتے ہیں تو ہماری گزارش ہوگی کہ پہلی فرصت میں ایف آئی آر دج نہ کی جائے بلکہ پہلے معاملہ کی تفصیلات معلوم کی جائے اور یہ تحقیق کی جائے کہ طلاق کی وجہ کیا ہے ،صحیح وجہ معلوم ہونے کے بعد دونوں کو صلح سمجھوتہ کا موقع دیاجائے اگر ایسا ممکن نہ ہوتو پھر شوہر کے خلاف اس صورت میں کاروائی کی جائے جب اس کا قصور پایا جائے اور اس کو غیر ضمانتی دفعات کے تحت سزا دی جائے ۔
اس سلسلے میں ملت ٹائمز سے بات کرتے ہوئے انہوں نے کہاکہ اگر پہلی فرصت میں ایف آئی آر درج ہوجاتی ہے تو پھر صلح سمجھوتہ اور کاﺅنسلنگ کا موقع نہیں مل پائے گا اور اس سے خاندان ٹوٹ جائے گا جبکہ خواتین مسلم پرسنل لاءبورڈ کی کوشش یہ ہوتی ہے کہ خاندان نہ بکھرے رشتہ برقرار رہے اور اسی صورت میں ہوگا جب پہلی فرصت میں ایف آر درج نہیں ہوگی اور صلح سمجھوتہ کرائے جائیں گے ۔اس صورت میں شوہر پر دباﺅ بھی بنارہے گا ۔

🇮🇳श्री रवी शंकर प्रसाद महोदय,क़ानून मन्त्री ,भारत सरकार ।🇮🇳**मेरी प्राथना है,परिवार खुशहाल रहे तरक्की करे ,आपका यह मक़सद 100%सफल हो, 100%न्याय प्रीय कामयाब ,लोकप्रीय क़ानून हो। ,इस सम्बन्ध में मेरा कुछ सुझाव है ** , 🙏🏼🥀आज आपने ,ने तलाक़ से सम्बन्ध मे जो ,कुछ सुधार किया है ।उसके लिये धन्यवाद व शुभकामनाएं ।परन्तु ,बड़ी विनम्रता से कहना चाहूंगी ,इसमें भी अभी दोबारा संशोधन करने का कष्ट करें।क्यों कि 🙏🇮🇳 जब तीन तलाक़ बैन है, तो मुक़दमा दर्ज ना करके प्रथम दृष्टि में , मैजिस्ट्रेट को चाहिये , मुक़दमा लिखने से पहले दोनो पक्षों के प्रकरण मे आई शिकायत पर न्याय प्रीय दृष्टि ,निशपक्षता , से जांच की जाऐ ,,तथा सुलह समझौता का रास्ता अपनाया जाए।जैसे पहले पत्नी डरी सहमी रहती थी ,तलाक़ की तलवार से ,और सुलह दोनो पक्षों के बीच सुलह का रास्ता नहीं अपनाया जाता था ,अब पुरूष को बिना अपना पक्ष रखे ,पत्नी या पत्नी के परिवार के कहने पर F.I.R,हो जाए ,तो यह न्याय ,व परिवार जोड़ने का प्रयास ,सुलह का रास्ता नहीं हुआ तो मेरी प्राथना है,परिवार खुशहाल रहे तरक्की करे ,आपका यह मक़सद 100%सफल हो, 100%न्याय प्रीय कामयाब ,लोकप्रीय क़ानून हो जय हिन्द , 🙏🏼🥀💐🙏🇮🇳

Posted by Shaista Ambar on Thursday, August 9, 2018

واضح رہے کہ مرکزی کابینہ نے تین طلاق بل میں تین ترمیمات کو منظوری دی ہے ۔ایک یہ کہ اگر کوئی شوہر اپنی بیوی کو ایک ساتھ تین طلاق دیتاہے اور رشتہ مکمل طور پر ختم کرلیتاہے تو اس صورت میں ایف آئی آر صرف متاثرہ یا خونی اور قریبی رشتہ دار کی طرف سے درج کی جائے گی ۔پہلے یہ تھاکہ تین طلاق دینے کے بعد کسی کی طرف سے بھی ایف آئی آر درج ہوسکتی تھی ۔دوسری ترمیم یہ کی گئی ہے کہ اگر میاں بیوی طلاق کے بعداپنے تنازعات کو ختم کرکے صلح سمجھوتہ پر رضامند ہوجاتے ہیں تو بیوی کی بات سننے کے بعد مجسٹریٹ مناسب شرائط کے ساتھ دونوں کے درمیان صلح سمجھوتہ کراسکتے ہیں اور شوہر کو ضمانت پر رہا کردیاجائے گاپہلے صلح سمجھوتہ اور ضمانت کا کوئی امکان نہیں تھا ۔تیسری ترمیم یہ ہوئی کہ تین طلاق دینے کے بعد شوہر کو تین سالوں کیلئے جیل کی سزا ہوگی اور یہ ناقل ضمانت سزا سمجھی جائے گی تاہم مجسٹریٹ کو ضمانت دینے کا خصوصی اختیار ہوگا ۔
دسمبر 2017 میں طلاق ثلاثہ بل لو ک سبھا میں ساتھ گھنٹہ کی بحث کے بعد صوتی ووٹ کے ذریعہ پاس کیاگیا تھا تاہم راجیہ سبھا میں اپوزیشن کے شدید اعتراض کی وجہ سے یہ بل پاس نہیں ہوسکاہے لیکن ایسا لگ رہاہے کہ اب یہ بل راجیہ سبھا سے بھی پاس ہوجائے گا کیوں کہ گذشتہ دنوں کانگریس نے کہاتھاکہ اگر چند ترمیمات منظور کرلی جاتی ہے تو کانگریس اس بل کی حمایت کرے گی ۔

Comments: 0

Your email address will not be published. Required fields are marked with *