فرانسیسی صدر کے اعتراف کے بعد راہل گاندھی کی پریس کانفرنس ،ملک جان گیا ہے چوکیدار چور ہے

انل امبانی کو جو ہزاروں کروڑ روپے کا معاہدہ ملا وہ وزیر اعظم مودی کے کہنے پر دیا گیا تھا۔ اس کا صاف مطلب ہے کہ اولاند وزیر اعظم مودی کو چور کہہ رہے ہیں اور وزیر اعظم مودی کے منھ سے ایک لفظ نہیں نکل رہا ہے

نئی دہلی (ایم این این )
رافیل معاہدہ پر کانگریس صدر راہل گاندھی نے وزیر اعظم نریندر مودی پر سخت حملہ کرتے ہوئے پریس کانفرنس میں ان پر کئی سنگین الزامات عائد کیے۔ راہل گاندھی نے کہا کہ فرانس کے سابق صدر فرینکوئس اولاند نے جو الزام لگایا ہے کہ وزیر اعظم نریندر مودی نے رافیل معاہدے میں بدعنوانی کی ہے، چوری کی ہے، اس کا جواب پی ایم مودی کو دینا چاہیے۔ انہوں نے کہا کہ جس رافیل طیارہ کا یو پی اے حکومت نے 526 کروڑ روپے میں سودا کیا تھا وہ انل امبانی کی مدد کرنے کے لئے 1600 کروڑ روپے میں خریدا گیا۔
راہل گاندھی نے الزام لگایا کہ اولاند نے بتایا ہے کہ انل امبانی کو جو ہزاروں کروڑ روپے کا معاہدہ ملا وہ وزیر اعظم مودی کے کہنے پر دیا گیا تھا۔ اس کا صاف مطلب ہے کہ اولاند وزیر اعظم مودی کو چور کہہ رہے ہیں اور وزیر اعظم مودی کے منھ سے ایک لفظ نہیں نکل رہا ہے۔ وزیر اعظم کو ملک کے عوام کو جواب دینا چاہئے ورنہ ملک کے عوام کے ذہن میں یہ بات گھس جائے گی کہ ملک کا چوکیدار چور ہے۔
دراصل رافیل معاہدہ کا فیصلہ وزیر اعظم جی نے لیا ہے اور فائدہ اسی شخص کو ملا ہے جو وزیر اعظم جی کے ساتھ نمائندہ وفد میں فرانس گیا تھا۔ یہ حقیقت اب کسی سے پوشیدہ نہیں کہ رافیل معاہدہ پر نرملا سیتارمن، منوہر پاریکر نے دستخط نہیں کیا بلکہ اس معاہدہ پر خود وزیر اعظم نریندر مودی نے دستخط کیا ھتا۔ پی ایم نریندر مودی نے معاہدہ انل امبانی کی ریلائنس کو دلایا اور اس معاہدہ سے 30 ہزار کروڑ روپے کا پورا فائدہ اپنے دوست امبانی کو دلا دیا۔ انل امبانی کی کمپنی 45 ہزار کروڑ روپے کے قرض میں ڈوبی ہوئی تھی اور اس کی مدد کرنے کے لیے ہی پی ایم مودی نے رافیل معاہدہ کا سہارا لیا۔راہل گاندھی نے کہا کہ وزیر دفاع نرملا سیتارمن نے پہلے کہا کہ وہ رافیل کی قیمت بتائیں گی، پھر کہا کہ نہیں بتا سکتی، یہ ٹاپ سیکرٹ ہے۔ فرانس کے صدر نے کہا کہ ہوائی جہاز کی قیمت بتانے سے متعلق کوئی رازداری نہیں ہے۔ یہ بیان مودی حکومت کے جھوٹ کو ظاہر کر رہی ہے۔ جس شخص پر ملک کے نوجوانوں نے بھروسہ کیا تھا اس شخص نے ملک کے لوگوں کا بھروسہ توڑا ہے۔ رافیل کے معاملے میں صد فیصد بدعنوانی ہوئی ہے۔پریس کانفرنس میں راہل گاندھی نے کہا کہ میں وزیر اعظم نریندر مودی کی مدد کرنا چاہتا ہوں، وزیر اعظم دفتر کی مدد کرنا چاہتا ہوں اور اسی لیے پی ایم مودی سے یہ مطالبہ کر رہا ہوں کہ وہ ملک کے سامنے ا? کر سابق فرانسیسی صدر کے الزامات پر صفائی پیش کریں۔ لیکن وہ ایسا نہیں کر رہے ہیں۔ وہ ملک کے سامنے آ کر کچھ نہیں کہہ رہے ہیں۔ حقیقت تو یہ ہے کہ لوگ ایک کے بعد ایک جھوٹ بول رہے ہیں۔اس دوران راہل گاندھی نے ایک اور بڑا الزام عائد کرتے ہوئے کہا کہ ایچ اے ایل (ہندوستان ایروناٹکس لمیٹڈ) سے یہ معاہدہ چھین کر انل امبانی کی کمپنی کو دے دیا گیا۔ کہا گیا کہ ایچ اے ایل کمپنی طیارہ بنانے کے لیے اہل نہیں تھی لیکن کمپنی کے سابق سربراہ نے خود سامنے آکر اس بات سے صاف انکار کیا کہ ایچ اے ایل کمپنی جہاز بنانے کے لیے تیار تھی۔ انل امبانی نے معاہدہ کے 12 دن پہلے ایک کمپنی بنائی۔ انل امبانی کی کمپنی نے کبھی زندگی میں ہوائی جہاز نہیں بنایا اس کے باوجود ملک کی سیکورٹی کے لیے بے حد اہم معاہدہ کے لیے ان کی کمپنی کا انتخاب کیا گیا۔

ملت ٹائمز ایک آزاد،غیر منافع بخش ادارہ ہے جس کی آمدنی کا کوئی ذریعہ نہیں۔اسے جاری رکھنے کیلئے مالی مدد درکارہے۔یہاں کلک کرکے تعاون کریں
Comments: 0

Your email address will not be published. Required fields are marked with *