بنگلہ دیش کے اپوزیشن رہنما طارق رحمن کو عدالت نے سنائی عمر قید کی سزا

بنگلہ دیش کی ایک عدالت نے اپوزیشن رہنما طارق رحمان کو عمر قید کی سزا سنائی ہے۔ خود ساختہ جلاوطنی اختیار کیے ہوئے رحمان بنگلہ دیش کی مرکزی اپوزیشن جماعت کے قائم مقام سربراہ ہیں اور سابق وزیر اعظم خالدہ ضیاءکے بیٹے ہیں۔
ڈھاکہ(ایم این این )
بنگلہ دیش کی ایک عدالت نے اپوزیشن رہنما طارق رحمان کو عمر قید کی سزا سنائی ہے۔ خود ساختہ جلاوطنی اختیار کیے ہوئے رحمان بنگلہ دیش کی مرکزی اپوزیشن جماعت کے قائم مقام سربراہ ہیں اور سابق وزیر اعظم خالدہ ضیاءکے بیٹے ہیں۔
خبر رساں ادارے ایسوسی ایٹڈ پریس کے مطابق ایک بنگلہ دیشی ٹریبونل نے 2004ءمیں ا±س وقت کی اپوزیشن رہنما کی سیاسی ریلی پر دستی بم سے حملہ کرنے کے مقدمے میں 19 افراد کو سزائے موت سنائی ہے۔ اسی مقدمے میں ملک کے قائم مقام اپوزیشن رہنما طارق رحمان کو عمر قید کی سزا سنائی گئی ہے۔ سزائے موت پانے والوں میں دو سابق وزراءبھی شامل ہیں۔
2004 میں کیے جانے والے اس گرینیڈ حملے میں ا±س وقت اپوزیشن رہنما اور موجود وزیر اعظم شیخ حسینہ زخمی ہوئی تھیں جبکہ دو درجن کے قریب افراد ہلاک ہو گئے تھے۔ ٹریبونل کے جج شاہد نورالدین نے دارالحکومت ڈھاکا کی ایک عدالت میں 14 برس قبل ہونے والے اس حملے کے تناظر میں دائر کیے جانے والے قریب 50 مقدمات کا فیصلہ سنایا۔ اس حملے میں 300 کے قریب افراد زخمی بھی ہوئے تھے۔

ایسوسی ایٹڈ پریس کے مطابق فیصلہ سنائے جانے کے وقت مسلح سکیورٹی اہلکاروں نے عدالت کے باہر گلیوں کو گھیر رکھا تھا۔ سزائے موت پانے والے ایک سابق وزیر لطف الزمان بابر نے اس فیصلے کے بعد صحافیوں کو بتایا کہ وہ بے قصور ہیں: ”خدا سب کچھ جانتا ہے، میں اس کے پیچھے نہیں تھا۔“
سابق وزیر اعظم خالدہ ضیاء کے بڑے بیٹے طارق رحمان کو اس حملے کی سازش میں ملوث ہونے کے الزام میں عمر قید کی سزا سنائی گئی ہے۔ وہ لندن میں رہتے ہیں اور یہ مقدمہ ان کی غیر موجودگی میں چلایا گیا۔ 11 دیگر لوگوں کو ان مقدمات میں چھ ماہ سے دو برس تک سزائے قید بھی سنائی گئی ہے۔
مبصرین کے مطابق طارق رحمان کو یہ سزا سنائے جانے سے رواں برس دسمبر میں ہونے والے انتخابات میں حسینہ واجد کی کامیابی کا امکان تقریبا یقینی ہو گیا ہے۔ سابق وزیر اعظم خالدہ ضیاء رواں برس فروری سے جیل میں ہیں جنہیں بدعنوانی کے الزامات کے تحت پانچ برس قید کی سزا سنائی گئی تھی۔ٹریبونل کے جج شاہد نورالدین کے مطابق سزا پانے والے افراد کے پاس 30 دن کا وقت ہے کہ وہ اس فیصلے کے خلاف بنگلہ دیشی ہائی کورٹ میں اپیل کر سکتے ہیں۔

ملت ٹائمز ایک آزاد،غیر منافع بخش ادارہ ہے جس کی آمدنی کا کوئی ذریعہ نہیں۔اسے جاری رکھنے کیلئے مالی مدد درکارہے۔یہاں کلک کرکے تعاون کریں
Comments: 0

Your email address will not be published. Required fields are marked with *