افغانستان خطرناک ملک ہے، مہاجرین کو واپس نہ بھیجا جائے

افغانستان میں شہریوں کے لیے پر تشدد حالات میں اضافے کے تناظر میں انسانی حقوق کے لیے سر گرم کارکنان نے یورپی یونین کی ریاستوں سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ افغان مہاجرین کو ان کے آبائی وطن واپس بھیجنا بند کریں۔
برلن(ایم این این )
افغانستان میں شہریوں کے لیے پر تشدد حالات میں اضافے کے تناظر میں انسانی حقوق کے لیے سر گرم کارکنان نے یورپی یونین کی ریاستوں سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ افغان مہاجرین کو ان کے آبائی وطن واپس بھیجنا بند کریں۔
انسانی حقوق کے لیے سرگرم تنظیموں کے مطابق افغانستان میں جاری خانہ جنگی کے نتیجے میں شہریوں کو بہت پ±ر تشدد حالات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے اور اس حوالے سے شہریوں کی ہلاکتوں میں بھی اضافہ ہوا ہے۔ تاہم اس کے باوجود یورپی یونین کی بعض ریاستیں افغان مہاجرین کی ڈی پورٹیشن جاری رکھنے کے معاملے میں پ±ر جوش نظر آتی ہیں۔
ایمنسٹی انٹرنیشنل سے وابستہ سمیرا حمیدی بخوبی جانتی ہیں کہ افغانستان میں رہنے والے شہری کن صعوبتوں کا سامنا کر رہے ہیں۔ حمیدی نے چند ماہ قبل ہی اس تنظیم میں ملازمت کی ہے۔ اس سے قبل ساری زندگی انہوں نے ملک میں خواتین کے حقوق کی جنگ لڑتے ہوئے گزار دی۔ سمیرا کا کہنا تھا،” کچھ پتہ نہیں ہوتا کہ آپ جو گھر صبح سلامت چھوڑ کے جائیں گے وہ واپسی پر آپ کو پورا ملے گا بھی یا نہیں۔“
سمیرا حمیدی کے ان خدشات کی تصدیق افغانستان کے لیے اقوام متحدہ کے معاون مشن ’یوناما‘ کی جانب سے جاری کردہ تازہ ترین اعداد و شمار نے بھی کر دی ہے۔ یوناما کے مطابق امسال اب تک بم حملوں اور پ±ر تشدد واقعات میں کم و بیش اتنے ہی شہری ہلاک ہو چکے ہیں جتنے سن 2017 میں ہوئے تھے۔حمیدی ایمنسٹی انٹرنیشنل کی جانب سے ا±س مہم کی قیادت بھی کر رہی ہیں جس میں یورپی ممالک سے افغان مہاجرین کی ڈی پورٹیشن معطل کرنے کو کہا گیا ہے۔
حمیدی نے ایک مظاہرے کے دوران ڈی ڈبلیو سے بات کرتے ہوئے کہا،” افغانستان میں شورش بڑھتی جا رہی ہے۔ کم سن بچوں، لڑکوں اور لڑکیوں کو واپس ایسے ملک میں بھیجنا، جو وہاں پیدا بھی نہیں ہوئے اور نہ ہی اس ملک کو جانتے ہیں، اور ایسے افراد کو بھی واپس بھیجنا جو بہت دشوار گزار سفر کے بعد بہتر زندگی کی تلاش میں یورپ پہنچے، بے حد نا انصافی ہے۔“
ایمنسٹی انٹرنیشنل نے ناروے، جرمنی، سویڈن اور ہالینڈ سے واپس افغانستان بھیجے جانے والے مہاجرین کے کیسز کو دستاویز کیا ہے۔ ان میں سے بعض ایسے بھی تھے جو واپس لوٹنے پر ہلاک ہو گئے۔ اور جو زندہ ہیں وہ سب بھی ایک مستقل خوف میں زندگی گزار رہے ہیں۔ ‘دی یورپین کونسل آن ریفیوجیز اینڈ ایگزائلز‘ نامی تنظیم نے ایک رپورٹ مرتب کی ہے جس کی ر±و سے افغان مہاجرین کی ملک بدریوں کے معاملے میں سب سے زیادہ سختی کا مظاہرہ کرنے والا ملک ناروے ہے۔

ملت ٹائمز ایک آزاد،غیر منافع بخش ادارہ ہے جس کی آمدنی کا کوئی ذریعہ نہیں۔اسے جاری رکھنے کیلئے مالی مدد درکارہے۔یہاں کلک کرکے تعاون کریں
Comments: 0

Your email address will not be published. Required fields are marked with *