مودی حکومت کو کسانوں کا الٹی میٹم ، ’4 جنوری کو زرعی قوانین رد نہیں ہوئے تو ...‘

مودی حکومت کو کسانوں کا الٹی میٹم ، ’4 جنوری کو زرعی قوانین رد نہیں ہوئے تو …‘

کسان مزدور سنگھرش کمیٹی کے لیڈر سکھوندر سنگھ نے مرکز کی مودی حکومت کو متنبہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ تینوں زرعی قوانین 4 جنوری کو رد نہیں کیے گئے تو آنے والے دنوں میں تحریک کو مزید تیزی دی جائے گی۔

زرعی قوانین کے خلاف دہلی کی سرحدوں پر ڈیرا جمائے کسانوں کی تحریک آج 37ویں دن بھی جاری ہے۔ سخت سردی کے باوجود کسانوں کے حوصلے بلند نظر آ رہے ہیں۔ مودی حکومت کے ساتھ کئی میٹنگوں کے بعد بھی کوئی حتمی نتیجہ نہیں نکل پایا ہے۔ حکومت کے رویہ کو دیکھتے ہوئے اب کسان تنظیموں نے اپنا رخ مزید سخت کرنے کا فیصلہ اعلان کر دیا ہے۔

کسان مزدور سنگھرش کمیٹی کے لیڈر سکھوندر سنگھ سبھرا نے مودی حکومت کو متنبہ کرتے ہوئے واضح لفظوں میں کہا ہے کہ ’’تینوں زرعی قوانین رد ہونے چاہئیں۔ اگر 4 جنوری کو اس کا کوئی حل نہیں نکلتا تو آنے والے دنوں میں تحریک کو مزید تیزی دی جائے گی۔‘‘ یہاں قابل ذکر ہے کہ دہلی میں اس وقت موسم بہت سرد ہے اور کسان کھلے آسمان کے نیچے زرعی قوانین کے خلاف مظاہرہ جاری رکھے ہوئے ہیں۔ یکم جنوری کو دہلی کا درجہ حرارت ایک ڈگری کے آس پاس ہے، لیکن کسان کسی بھی حال میں اپنے قدم پیچھے کھینچنے کے لیے تیار نہیں ہیں۔

واضح رہے کہ کسانوں کے مظاہرہ کے سبب چیلا اور غازی پور بارڈر کو پہلے سے ہی بند کر دیا گیا ہے۔ دوسری طرف سنگھو بارڈر پر 80 کسان تنظیموں کی میٹنگ بھی ہو رہی ہے۔ اس سے قبل کسان اور حکومت کے درمیان ساتویں دور کی بات چیت میں دو ایشوز پر اتفاق قائم ہوا تھا۔ 4 جنوری کو آٹھویں دور کی میٹنگ ہونی ہے۔ اس میٹنگ سے قبل کسان تنظیمیں آگے کا منصوبہ تیار کرنے میں مصروف ہیں۔

Comments: 0

Your email address will not be published. Required fields are marked with *