6 مارچ کو کنڈلی ۔ منیسر۔ پلول شاہراہ پر کسان کریں گے پانچ گھنٹے چکہ جام

6 مارچ کو کنڈلی ۔ منیسر۔ پلول شاہراہ پر کسان کریں گے پانچ گھنٹے چکہ جام

کل کسان کرناٹک سے ایم ایس پی دلاؤ مہم شروع کریں گےجس میں کسان اپنی فصل لیکر منڈی جائیں گے اور ملک کے وزیر اعظم سے مانگ کریں گے کہ ایم ایس پی دلاؤ۔

کسان جوائنٹ مورچہ نے 6 مارچ کو کنڈلی۔ منیسر۔ پلول (کے ایم پی) پر پانچ گھنٹے چکہ جام کرنے کا اعلان کیا ہے۔
کنڈلی بارڈر احتجاج کے مقام پر جوائنٹ مورچہ کی قومی کمیٹی کی میٹنگ کے بعدکل صحافیوں سے بات چیت میں کسان لیڈر بلبیر سنگھ راجیوال، یوگیندر یادو، ابھیمنیوکوہاڑ، دھرمیندر ملک، رمضان چودھری، جوگیندر نین اور ڈاکٹر درشن پال نے کہا کہ چھ مارچ کو تحریک کے 100 دن پورے ہورہے ہیں اور اس دن صبح گیارہ بجے سے شام چار بجے تک کے ایم پی ایکسپریس وے پر جگہ جگہ جام کیا جائے گا۔ اس کے ساتھ ہی باقی ملک میں کالے جھنڈے لگاکر احتجاج ظاہر کیا جائے گا اور احتجاج کے مقام پر کسان کالی پٹی باندھیں گے۔
کسان لیڈروں کی اس سے قبل پانچ مارچ کو کرناٹک سے ایم ایس پی دلاؤ مہم شروع ہورہی ہے۔ اس میں کسان اپنی فصل لیکر منڈی میں جائیں گے اور ملک کے پی ایم مودی سے مانگ کریں گے کہ ایم ایس پی دلاؤ۔ اگر ملک میں ایم ایس پی نافذ ہے تو ان کی فصل کم دام پر کیوں فروخت ہورہی ہے۔ یہ مہم اس کے بعد مہاراشٹر، تلنگانہ، مدھیہ پردیش سے ہوتے ہوئے ملک بھر میں چلے گی تاکہ کسانوں کو سچ کا پتہ چلے کہ آخر ایم ایس پی کے سلسلے میں کیوں لڑائی لڑی جارہی ہے۔
واضح رہےکسانوں کی بڑی تعداد 26 نومبر سے دہلی کی سرحدوں پر نئے زرعی قوانین کے خلاف احتجاج کر رہےہیں۔ 6 مارچ کو ان کے اس احتجاج کےسو دن مکمل ہونے جا رہے ہیں۔ کسانوں کا مطالبہ ہے کہ حکومت ان قوانین کوواپس لے لےلیکن حکومت اس کے لئےتیار نہیں ہے۔ اس تعلق سے حکومت کی کسان نمائندوں کے ساتھ کئی دور کی بات بھی ہوئی ہےلیکن اس میں کوئی نتیجہ برامد نہیں ہوا۔

Comments: 0

Your email address will not be published. Required fields are marked with *