مدارس کے اساتذہ فرصت کے لمحات کو علمی کاموں میں لگائیں: نائب امیر شریعت

مدارس کے اساتذہ فرصت کے لمحات کو علمی کاموں میں لگائیں: نائب امیر شریعت

وفاق المدارس الاسلامیہ امارت شرعیہ کی میٹنگ میں مدارس کے سلسلہ میں اہم تجاویز منظور
پٹنہ : وفاق المدارس الاسلامیہ امارت شرعیہ کی ایک اہم میٹنگ آج مورخہ 10جولائی 2021بروز سنیچر کو امارت شرعیہ میں حضرت مولانا محمد شمشاد رحمانی قاسمی صاحب نائب امیر شریعت بہار،اڈیشہ و جھارکھنڈ کی صدارت میں منعقد ہوئی ۔ اس میٹنگ میں قائم مقام ناظم امارت شرعیہ مولانا محمد شبلی القاسمی ، وفاق المدارس کے نائب صدر مولانا قاری شبیراحمدصاحب ناظم مدرسہ اسلامیہ شکر پور بھروارہ،مولانامفتی محمد ثناء الہدیٰ قاسمی نائب ناظم امارت شرعیہ و ناظم وفاق لمدارس الاسلامیہ، مولانا مفتی سہیل احمد قاسمی صدر مفتی امارت شرعیہ و خزانچی وفاق المدارس الاسلامیہ، مولانا مفتی سعید الرحمن قاسمی مفتی امارت شرعیہ و معاون ناظم وفاق المدارس الاسلامیہ، مولانا سہیل احمد ندوی نائب ناظم امارت شرعیہ، مولانا مفتی وصی احمد قاسمی نائب قاضی شریعت امارت شرعیہ ، مولانامحمد سعید کریمی صاحب رفیق وفاق المدارس الاسلامیہ شریک ہوئے ۔لاک ڈاؤن کی وجہ سے امارت شرعیہ میں موجود اراکین ہی میٹنگ میں شریک ہوئے ، سرکاری ضابطہ کی مجبوری کی وجہ سے دیگر ارکان کو زحمت نہیں دی گئی ۔
میٹنگ میں اتفاق رائے سے یہ بات طے ہوئی کہ تربیتی اجتماع بین المدارس مورخہ 11,12,13اکتوبر 2021 مطابق 4,5,6ربیع الاول1443ہجری کو مدرسہ اسلامیہ شکر پور بھروارہ دربھنگہ میں منعقد ہو گا۔ اجتماع کے آخری دن نئے میقات کے لیے ذمہ داران کا انتخاب بھی عمل میں آئے گا۔
میٹنگ میں وفاق المدارس الاسلامیہ امارت شرعیہ سے ملحق مدارس کو کھولنے کے سلسلہ میں یہ بات آئی کہ گرچہ سرکار نے تعلیمی اداروں کو پچاس فیصد طلبہ کے ساتھ آف لائن تعلیم شروع کرنے کی اجازت دی ہے ، مگر ہاسٹل کے نظام کو شروع کرنے کی اجازت نہیں ہے ، اس لیے جب تک حکومت کی جانب سے مدارس اسلامیہ اور ہاسٹلوں کے کھولے جانے کا باضابطہ اعلان نہ کر دیا جائے، اس وقت تک مدارس نہ کھولے جائیں اور تعلیمی کارروائی کا آغاز نہ کیا جائے ، اس سلسلہ میں مکمل احتیاط برتی جائے ، تاکہ مدارس کو بد نام کرنے اور ان کے خلاف کسی طرح کی کارروائی کا موقع حکومت کو نہ مل سکے ۔جب حکومت کی جانب سے مدارس کھلنے کا اعلان کر دیا جائے تو مدارس کھولے جائیں، اور ان شرائط اور احتیاطی تدابیر کا مکمل لحاظ کیا جائے؛ جو حکومت کی جانب سے ضروری قرار دیے گئے ہوں، درس گاہوں ، رہائشی حجروں اور دفاتر میں سماجی فاصلے کی رعایت کی جائے، اور جس طرح کی ہدایات ہوں، ان کے مطابق مدرسوں میں نظم کیا جائے۔ جن مدارس اور وہاں کے طلبہ کے پاس ایسی سہولت ہو کہ ان کے لئے آن لائن تعلیم ممکن ہو، وہاں درجۂ حفظ اور عربی درجات کے لیے اس کا نظم کرنا مناسب ہوگا۔ ایسے اساتذہ جو علمی کام کر سکتے ہوں وہ فرصت کے لمحات کو علمی کاموں میں لگائیں ۔ اپنے اوقات کو علاقہ کے اکابر علماء و مشائخ کی سوانح کی ترتیب اور مدارس کی ڈائرکٹری تیار کرنے کے کام میں بھی لگا سکتے ہیں۔
آمد ورفت کی سہولت پیدا ہوجانے کی وجہ سے سرکاری ضابطوں کی پابندی کے ساتھ اہل خیر سے رابطہ کا سفر بھی کیا جا سکتا ہے تاکہ مدارس کی مالیات کو مستحکم کیا جاسکے۔اس سلسلہ میں علاقہ کے لوگوں کے ساتھ میٹنگ بھی مفید ہے۔تعلیمی سلسلہ بحال ہونے کے بعد بھی طلبہ کا دینی تعلیم کے حصول کے لیے بیرون ریاست کا سفر آسان نہیں ہوگا، اس لیے مدارس کے ذمہ داران، گارجین حضرات سے رابطہ کے بعد اس امر کو یقینی بنائیں کہ وہ اپنی آگے کی تعلیم کے لیے بہارکے ہی اعلیٰ معیار کے مدارس کا انتخاب کریں۔لاک ڈاؤن کی وجہ سے اس سال زیادہ تر مدارس میں سالانہ امتحان کا انعقاد نہیں ہو سکا، جن مدارس نے امتحان لے کر مدرسہ بند کیا ہے، وہ  امتحان کے نمبرات داخل دفتر کریں،اور ترقی ٔدرجات کا جو اصول بنایا ہے اس سے دفتر وفاق کو مطلع کریں۔ بہار سے باہر کے بڑے مدارس نے امسال جدید داخلہ بند کر دیا ہے ؛ اس لئے بہار کے مدارس تعلیمی ادارے کھولنے کی اجازت کے بعد آخری درجہ کے طلبہ کے لیے اپنے مدرسہ میں تعلیم کا انتظام کر دیں، تاکہ ان طلبہ کا سال نہ برباد ہو۔ حضرات اساتذہ کرام اور کارکنان کی تنخواہ کی ادائیگی پر بھی توجہ مرکوز کی جائے ۔ مدارس کھلنے کے بعد جن طلبہ کو سردی ، کھانسی ، بخار وغیرہ ہوجائے ان کا جلد از جلد علاج کرایا جائے ،نیز ان کے سرپرست اوروالدین کو خبر دے کر گھر بھیج دیا جائے۔دارالاقامہ میں ضابطہ کے مطابق فاصلہ کے ساتھ سونے بیٹھنے کا خیال رکھا جائے۔ قادر مطلق اللہ رب العزت ہے، کائنات کا نظام اسی کے ہاتھ ہے، اس لیے آہ سحرگاہی اور دعاء نیم شبی کا خاص اہتمام کیا جائے، یومیہ اجتماعی اور انفرادی دعاؤں کو معمول کا حصہ بنالیا جائے، اللہ تعالیٰ کورونا جیسی مہلک بیماری سے پوری انسانیت کی حفاظت فرمائے اور عبادت گاہوں اور تعلیمی اداروں کو کھولنے کی راہ پیدا فرمائے۔آ خر میں حضرت نائب امیر شریعت کی دعا پر مجلس کا اختتام ہوا۔

Comments: 0

Your email address will not be published. Required fields are marked with *