ہندوستانی گھرانے بڑھتے ہوئے اخراجات سے پریشان: سروے

نئی دہلی: آئی اے این ایس-سی ویٹر کے سروے کے مطابق ہندوستانی گھرانے بڑھتے ہوئے اخراجات سے پریشان نظر آتے ہیں اور گزشتہ ایک سال سے لوگوں کی آمدنی یا تو کم ہو گئی ہے یا جمود کا شکار ہے۔ آئی اے این ایس کی جانب سے سی ووٹر نے چار ریاستوں آسام، مغربی بنگال، تمل ناڈو، کیرالہ اور مرکز کے زیر انتظام علاقہ پدوچیری میں کئے گئے ایک خصوصی سروے کے دوران سامنے آئی، ان ریاستوں میں 2021 میں اسمبلی انتخابات ہوئے تھے۔

سروے کے دوران لوگوں سے کئی مسائل پر کئی سوالات پوچھے گئے جنہوں نے ملک کو درپیش سماجی، سیاسی اور معاشی چیلنجز پر اپنی رائے دی۔ اگرچہ ریاستی حکومتوں اور وزرائے اعلیٰ نے کارکردگی کی درجہ بندی پر کافی اچھا اسکور کیا ہے، تاہم عام ووٹر کا خیال ہے کہ 2021 میں انتخابات ہونے کے بعد سے ان کے خاندانوں کی مالی حالت ابتر ہو گئی ہے۔

آسام میں تقریباً 51 فیصد جواب دہندگان نے کہا کہ خاندان کے اخراجات میں اضافہ ہوا ہے، جبکہ آمدنی میں کمی واقع ہوئی ہے۔ مزید 19 فیصد کا خیال تھا کہ خاندان کی آمدنی مستحکم رہی، لیکن اخراجات میں اضافہ ہو۔

دوسری ریاستوں میں بھی کہانی کچھ زیادہ مختلف نہیں ہے، جہاں 2021 میں انتخابات ہوئے تھے۔ مغربی بنگال کے پڑوسی آسام میں 46.5 فیصد جواب دہندگان نے کہا کہ پچھلے سال خاندان کی آمدنی میں کمی آئی ہے، جبکہ اخراجات میں اضافہ ہوا ہے۔ مزید 31.5 فیصد نے دعویٰ کیا کہ خاندان کی آمدنی مستحکم رہی، جبکہ اخراجات میں اضافہ ہوا۔

جنوب کے ووٹروں نے بھی اسی طرح کے جذبات کا اظہار کیا۔ کیرالہ میں 39 فیصد جواب دہندگان نے کہا کہ ان کی ذاتی آمدنی میں کمی آئی ہے جبکہ خاندانی اخراجات میں اضافہ ہوا ہے، جبکہ 34 فیصد جواب دہندگان نے دعوی کیا کہ آمدنی جمود کا شکار ہے، جبکہ اخراجات میں اضافہ ہوا ہے۔

تمل ناڈو میں 39 فیصد جواب دہندگان نے کہا کہ اخراجات میں اضافہ ہوا ہے، جبکہ ذاتی آمدنی میں کمی آئی ہے۔ مزید 35 فیصد نے کہا کہ ذاتی آمدنی جمود کا شکار ہے، جبکہ خاندانی اخراجات میں اضافہ ہوا ہے۔

SHARE
ملت ٹائمز میں خوش آمدید ۔ اپنے علاقے کی خبریں ، گراﺅنڈ رپورٹس اور سیاسی ، سماجی ،تعلیمی اورادبی موضوعات پر اپنی تحریر آپ براہ راست ہمیں میل کرسکتے ہیں ۔ millattimesurdu@gmail.com