صومالیہ: انتہا پسند باغی گروپ الشباب کے حملے میں 19 افراد جاں بحق

موغادیشو: صومالیہ کے انتہا پسند باغی گروپ الشباب کے جنگجوؤں نے ملک وسطی علاقے میں رات کے وقت حملہ کر کے کم از کم 19 شہریوں کو ہلاک کر دیا۔ قبیلے کے سربراہوں اور مقامی عہدیداروں نے یہ اطلاع دی۔ ریاست صومالیہ کے خلاف بغاوت کرنے والے الشباب نے یہ حملہ دارالحکومت موغادیشو کے ایک ہوٹل کا 30 گھنٹے تک محاصرہ کرنے کے دو ہفتوں کے بعد کیا ہے، اس واقعہ میں 21 افراد ہلاک اور 117 زخمی ہوئے تھے۔

ذرائع نے بتایا کہ اس گروپ نے جمعہ اور ہفتہ کی شب دو قصبوں کے درمیان سفر کرنے والی کم از کم 8 گاڑیوں کو روکا اور انہیں نذر آتش کر دیا، اس کے علاوہ ایک گاؤں کے قریب متعدد مسافروں کو ہلاک کر دیا۔ مقامی قبیلے کے بزرگ عبدالحی حرید نے اے ایف پی کو بتایا ”دہشت گردوں نے رات کے وقت سفر کرنے والے معصوم شہریوں کا قتل عام کیا ہے۔ ہمارے پاس متاثرین کی صحیح تعداد نہیں ہے لیکن 19 لاشیں برآمد کی گئی ہیں۔”

ہیران علاقے کے گورنر علی جیتے، جہاں یہ حملہ ہوا، نے کہا ”مہلوکین میں بچے اور خواتین بھی شامل ہیں۔ مزید لاشوں کی تلاش کی جا رہی ہے اور ہلاکتوں کی تعداد 20 سے زیادہ بھی ہو سکتی ہے۔” ایک اور مقامی قبیلے کے رہنما، محمد عبدالرحمان نے کہا ”یہ ایک خوفناک حملہ تھا، ایسا ہمارے خطے میں کبھی نہیں ہوا تھا، وہ تمام معصوم شہری تھے۔”

وہیں الشباب گروپ نے ایک بیان میں دعویٰ کیا ہے کہ اس نے ایسے جنگجوؤں کو نشانہ بنایا جنہوں نے حال ہی میں حکومتی فورسز کی مدد کی تھی۔ گروپ کا دعویٰ ہے کہ حملہ میں 20 “ملیشیاؤں اور ان کے لیے سامان لے جانے والے افراد” کو ہلاک کیا گیا ہے۔ خیال رہے کہ مقامی جنگجوؤں اور سیکورٹی فورسز نے اگست کے آخر میں علاقے میں الشباب سے کئی گاؤں پر دوبارہ قبضہ کر لیا تھا۔

SHARE
ملت ٹائمز میں خوش آمدید ۔ اپنے علاقے کی خبریں ، گراﺅنڈ رپورٹس اور سیاسی ، سماجی ،تعلیمی اورادبی موضوعات پر اپنی تحریر آپ براہ راست ہمیں میل کرسکتے ہیں ۔ millattimesurdu@gmail.com