جھارکھنڈ ہائی کورٹ کا فیصلہ: 15سال کی مسلم لڑکی اپنی پسند کے لڑکے سے شادی کرنے کو ہے آزاد

رانچی: جھارکھنڈ ہائی کورٹ نے مسلم پرسنل لا کا حوالہ دیتے ہوئے اپنے ایک فیصلے میں کہا ہے کہ 15 سال یا اس سے زیادہ عمر کی مسلم لڑکیوں کو اپنے سرپرستوں کی مداخلت کے بغیر اپنی پسند کے شخص سے شادی کرنے کی آزادی ہے۔ عدالت نے یہ بات ایک مسلم نوجوان کے خلاف درج کی گئی ایف آئی آر کی بنیاد پر فوجداری کارروائی کو منسوخ کرتے ہوئے کہی جس نے اپنی برادری کی 15 سالہ لڑکی سے شادی کی۔ ایف آئی آر میں بہار کے نوادہ کے رہنے والے 24 سالہ محمد سونو پر الزام ہے کہ اس نے جھارکھنڈ کے جمشید پور کے جگسلائی سے ایک 15 سالہ مسلم لڑکی کو شادی کا لالچ دے کر اغوا کیا۔ سونو نے لڑکی کے والد کی طرف سے درج ایف آئی آر کی بنیاد پر فوجداری کارروائی کو عدالت میں چیلنج کیا اور جھارکھنڈ ہائی کورٹ میں درخواست دائر کی۔ تاہم سماعت کے دوران لڑکی کے والد نے کہا کہ وہ شادی کے خلاف نہیں ہیں۔ اپنی بیٹی کے لیے “ایک شوہر کی تلاش مکمل کرنے” پر اللہ کا شکر ادا کرتے ہوئے، لڑکی کے والد نے عدالت کو بتایا کہ اس نے محمد سونو کے خلاف “کسی غلط فہمی کی وجہ سے” ایف آئی آر درج کرائی ہے۔ دراصل لڑکی کے خاندان کی نمائندگی کرنے والے وکیل نے بھی عدالت کو بتایا کہ دونوں خاندانوں نے شادی کو قبول کر لیا ہے۔

دونوں فریق کو سننے کے بعد جسٹس ایس کے۔ دویدی کی سنگل بنچ نے سونو کے خلاف درج ایف آئی آر کو رد کرنے اور اس کی بنیاد پر فوجداری کارروائی شروع کرنے کا حکم دیا۔ لڑکی کے والد نے سونو کے خلاف آئی پی سی کی دفعہ 366 اے اور 120 بی کے تحت ایف آئی آر درج کرائی۔ ہائی کورٹ نے بدھ کو اپنے فیصلے میں کہا کہ مسلم لڑکیوں کی شادی سے متعلق معاملات مسلم پرسنل لا بورڈ کے زیر انتظام ہیں۔ اس خاص کیس کے تناظر میں عدالت نے یہ بھی کہا کہ لڑکی کی عمر 15 سال ہے اور مسلم پرسنل لاء کے مطابق وہ اپنی پسند کے شخص سے شادی کرنے کے لیے آزاد ہے۔

(نیوز 18 اردو) 

SHARE
ملت ٹائمز میں خوش آمدید ۔ اپنے علاقے کی خبریں ، گراﺅنڈ رپورٹس اور سیاسی ، سماجی ،تعلیمی اورادبی موضوعات پر اپنی تحریر آپ براہ راست ہمیں میل کرسکتے ہیں ۔ millattimesurdu@gmail.com