کیوں منائیں نہ ہم عالمی یومِ زن

Barqi Azamiاحمد علی برقیؔ اعظمی

ads

کیوں منائیں نہ ہم عالمی یومِ زن
ہے یہی زن جو ہے رونقِ انجمن

ہے غزل میں تغزل کا مظہر یہی
ہے یہی رونقِ بزمِ شعرو سخن

عالمِ رنگ و بو اس سے معمور ہے
زندگی میں اسی سے ہے اک بانکپن

منحصر اس پہ ہیں بزم آرائیاں
اس کے مرہونِ منت ہیں یہ جان و تَن

ہے یہ انعام نوعِ بشر کے لئے
کیوں تصدق نہ ہو اس پہ حُسنِ چمن

بطنِ مادر کے مرہونِ منت ہیں ہم
جس کے حصے میں ہے صرف رنج و محن

پرورش کررہی ہے جو اولاد کی
نوچتے ہیں اسے بن کے زاغ و زغن

فرض ہے حُرمتِ زن ہمارے لئے
جس کا اظہار ہے عالمی یومِ زن

اس سے سرسبز ہے گُلشنِ زندگی
ہے یہ برقیؔ ہمارے لئے گُلبدن

SHARE