دانش کا جسد خاکی طالبان نے ریڈ کراس کے حوالے کردیا

دانش کا جسد خاکی طالبان نے ریڈ کراس کے حوالے کردیا

مرحوم دانش صدیقی کی حالیہ تصویر

معروف فوٹو جرنلسٹ دانش صدیقی نے اپنے غیر معمولی کام کی وراثت چھوڑ ی ہے اور انہیں فوٹو گرافی کے لئے پلتزر ایوارڈ ملا تھا۔

افغانستان میں طالبان کے حملے میں اپنی جان گنوانے والے فوٹو جرنلسٹ دانش صدیقی کا جسد خاکی طالبان نے ریڈ کراس کے حوالے کردیا ہے اور اب اسے ملک میں لانے کے لئے کابل میں ہندوستانی سفارت خانہ افغان حکومت کے رابطے میں ہے۔
ذرائع نے بتایا کہ کابل میں ہندوستانی سفارت خانہ مسٹر صدیقی کی میت کو واپس لانے کے لئے افغانستان حکومت سے رابطے میں ہے۔ انہوں نے کہا ، “ہمیں بتایا گیا ہے کہ یہ میت طالبان نے انٹرنیشنل ریڈ کراس کے حوالے کردی ہے۔”
ذرائع نے بتایا کہ ہندوستانی سفارتخانے کے اہلکار میت حاصل کرنے کے لئے افغان حکومت اور انٹرنیشنل ریڈ کراس کے ساتھ ہم آہنگی اور تعاون پر کام کر رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ہندوستان میں یہاں کی وزارت خارجہ کے عہدیدار ان کے اہل خانہ کو تمام سرگرمیوں کے بارے میں باخبر رکھے ہوئے ہیں۔
واقعے کے وقت ، وہ قندھار کے ضلع اسپن بولدک میں افغان سیکیورٹی فورسز اور طالبان عسکریت پسندوں کے درمیان قندھار میں شدید لڑائی کی کوریج کر رہے تھے۔ اسے قندھار میں افغان فورسز کی سیکورٹی حاصل تھی ۔
ہندوستان میں افغانستان کے سفیر فرید مامودے نے جمعہ کے روز ایک ٹویٹ میں یہ معلومات شیئر کی۔ مسٹر مامودے نے ٹویٹ کرکے کہا : “جمعرات کی رات قندھار میں دوست دانش کے قتل کے بارے میں جان کر بہت افسردہ ہوں ۔ہندوستانی صحافی اور پلتزر انعام یافتہ دانش افغان سیکیورٹی فورسز کے ساتھ تھے۔ میں ان سے دو ہفتہ قبل ملا تھا ، جب وہ کابل جا نے والے تھے۔ میری ہمدردیاں ان کے اہل خانہ کے ساتھ ہیں۔ “

وزیر اطلاعات و نشریات انوراگ ٹھاکر نے انھیں خراج عقیدت پیش کرتے ہوئےٹوئیٹ کیا ، “دانش صدیقی نے اپنے غیر معمولی کام کی وراثت چھوڑ دی ہے۔ انہیں فوٹو گرافی کے لئے پلتزر ایوارڈ ملا تھا اور انہیں قندھار میں افغان فورسز سیکیورٹی حاصل تھی۔ میں اس کی ایک تصویر شیئر کر رہا ہوں۔ عاجزانہ خراج عقیدت۔ خدا ان کی روح کو سکون عطا کرے۔ ”
مسٹر صدیقی ممبئی میں رہتے تھے۔ انہوں نے دہلی کی جامعہ ملیہ اسلامیہ سے معاشیات میں گریجویشن کی اور 2007 میں اسی یونیورسٹی سے ماس کمیونی کیشن کی تعلیم حاصل کی۔ انہوں نے انٹرن اور رپورٹنگ کی حیثیت سے 2010 میں رائٹرز میں شمولیت اختیار کی۔ بعد میں اس نے فوٹو جرنلزم کرنا شروع کیا۔ انہیں سال 2018 میں فوٹوگرافی کے لئے پلتزر ایوارڈ سے نوازا گیا تھا۔
(بشکریہ قومی آواز)

Comments: 0

Your email address will not be published. Required fields are marked with *