دہلی میں غیر مسلم کمیونٹی کی جانب سے مسلمان عورت پر قاتلانہ حملہ کرکے خنزیر کا گوشت کھلانے کی کوشش ، مسلمانوں نے کیا تھانہ کا گھیراﺅ ،ملزمین گرفتار

8

نئی دہلیملت ٹائمز
محمد قیصر صدیقی کی رپوٹ
دہلی کے ترلوک پوری علاقے کے 18 بلاک/377 میں رہنے والی ناظمہ کے گھر میں کچھ غیر مسلم سماج نے آکر ان پر حملہ کر دیا حملہ کرنے والے کے نام راجو اور ان کے بیٹے وشال کے ساتھ دو لڑکوں اور تھے 3 جون 2017 کا واقعہ ہے۔ پولیس تھانہ میںدرج کئے گئے ایف آئی آرمطابق ناظمہ کے شوہر جہانگیر حسن کا کہنا ہے کہ میں 12 بجے دن میں اپنے بچوں کے ساتھ گھر میں تھا،ناظمہ قرآن پڑھنے جا رہی تھی تبھی راجو نام کی عورت اپنے ہاتھ میں سورکا گوشت اور اس کے ساتھی ڈنڈے کے ساتھ میرے گھر میں داخل ہوئے اور مجھے گالیاں دینے لگے، اس کے بعد اس کا بیٹا پیچھے میرا ہاتھ پکڑکر کپڑا پھارنے لگا اور راجو اپنے ہاتھ سے سور کا گوشت مجھے زبردستی کھلانے لگی ،جب میں نے شور مچایا تو کچھ لوگ دورے تب اس نے گوشت کو میرے گھر میں ہی پھینک دیا اوراپنے ساتھی کے ساتھ فرار ہوگئی، بھاگتے ہوئے اس نے مجھے اور میرے شوہر کو قتل کرنے کی دھمکی بھی۔ ملت ٹائمز کو اطلاع کے مطابق راجو پہلے اسی گلی میں رہتی تھی جس گلی میں ناظمہ رہتی ہیں۔
یہ خبر جیسے ہی عوام میں پھیلے بڑی تعداد میں لوگ جمع ہوگئے اور تھانہ کا گھیراﺅ کرکے مجرم کی گرفتاری کا شدید مطالبہ شروع کردیا، بعد میور وہار تھانہ نے دفعہ 395A / 354/452 // 506/34 کے تحت کاروائی کرتے ہوئے ملزمین کو گرفتار کر لیا ہے۔