وحدتِ اسلامی نے مودی حکومت کے تازہ شہریت نوٹیفکیشن کو ٹھہرایا غیر قانونی

وحدتِ اسلامی نے مودی حکومت کے تازہ شہریت نوٹیفکیشن کو ٹھہرایا غیر قانونی

پڑوسی ممالک کی اقلیتوں کو شہریت دینے کے مرکزی حکومت کے اقدام کو غلط اور غیرقانونی اور اسے دستور کی خلاف وزری قرار دیتے ہوئے وحدت اسلامی نے عوام سے اپیل کی ہے کہ اسے عدالت میں چیلنج کیا جائے۔

اورنگ آباد: موجودہ شہریت ایکٹ 1955 کی بنیاد پر نوٹیفکیشن شائع کر کے، پڑوسی ممالک کی اقلیتوں کو شہریت دینے کے مرکزی حکومت کے اقدام کو غلط اور غیرقانونی اور اسے دستور کی خلاف وزری قرار دیتے ہوئے وحدت اسلامی نے عوام سے اپیل کی ہے کہ اسے عدالت میں چیلنج کیا جائے۔

واضح رہے کہ مرکزی حکومت کی جانب سے شہریت ایکٹ 1955 کو بنیاد بنا کر ایک نوٹیفکیشن شائع کیا گیا ہے جس میں 13 اضلاع میں پڑوسی ممالک کی اقلیتوں کو شہریت دینے کا حکم دیا گیا ہے۔ اقلیتوں میں صرف ہندو، سکھ، بدھسٹ، جین، پارسی اور عیسائی کو اس ضمن میں شامل کیا گیا ہے۔ جوائنٹ سیکرٹری یا کلکٹر کو یہ اختیار دیا گیا ہے کہ وہ مطمئن ہوں تو ان لوگوں کو متعلقہ شہروں میں شہریت دی جا سکتی ہے۔ وحدت اسلامی ہند کے سیکریٹری جنرل ضیاء الدین صدیقی نے نوٹیفکیشن کو فوری واپس لینے کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ یہ دستور کے بنیادی حقوق کے خلاف ہونے کی وجہ سے اسے غیر قانونی ہے۔ اس ضمن میں جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ، ایسا کوئی حکم نامہ مرکزی حکومت نکالنے کا قانونی حق نہیں رکھتی، کیونکہ بنیادی طور پر یہ دستور کے بنیادی حقوق کے خلاف ہے۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ 1955 شہریت ایکٹ کے تحت شہریت دینے کے لئے ذات پات یا مذہب کی کوئی تخصیص نہیں کی جا سکتی ہے۔ CAA جو اس سلسلے میں ترمیم کا درجہ رکھتا ہے، اس کی تفصیلات ابھی تک طے نہیں ہوئی ہیں۔ اس کا مسئلہ بھی عدالت میں زیر التواء ہے۔ بیان اس نوٹیفیکیشن کو فوری واپس لینے کا مطالبہ کیا ہے اور عوام سے اپیل کی ہے کہ اسے عدالت میں چیلنج کیا جائے۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ ملک کورنا کی وباء کی مار سے ابھی جوجھ رہا ہے اور حکومت کو ایسے قانون کو نافذ کرنے کی جلدی پڑی ہے جس پر اختلاف رائے بڑی تعداد میں موجود ہے۔ ملک کی ایک بڑی اقلیت کے بنیادی حقوق کو پامال کرکے اس قانون کو نافذ کرنے کی کوشش سیدھے سیدھے ہندوتوا ایجنڈے کا نفاذ ہے۔ ابھی کسانوں کے لیے بنائے گئے 3 قوانین کا مسئلہ حل نہیں ہوا ہے، CAA, NRC اور NPR جیسے معاملات پر شاہین باغ کی پوری تحریک گواہی دے رہی ہے کہ ان قوانین کو اب ٹھنڈے بستے میں ڈال دینا چاہیے، لیکن پلٹ پلٹ کر انہی معاملات پر توجہ سوچی سمجھی اسکیم کا حصہ ہے۔

کشمیر سے لے کر لکشدیپ تک جس طرح سے قوانین کو نافذ کرنے کی کوشش کی جارہی ہے اس سے نفرت اور سیاست کی بو آتی ہے۔ آسام، بنگال اور یوپی کی صورتحال نے حکومت کے اصلی چہرے کو بے نقاب کر دیا ہے۔ ایسی صورتحال میں قفل بندی کا ناجائز فائدہ فائدہ اٹھا کرحکومت ایسی پالیسیوں کو انجام تک پہنچا رہی ہے۔ بیان میں اپیل کی ہے کہ عوام بالخصوص مسلمان بیدار ہوں اور اپنے حقوق کی انصاف کے ساتھ لڑائی لڑیں، ایمان، اتحاد اور استقامت کے ساتھ مزاحمت کے ذریعے ہی ایسے مسائل حل ہو سکتے ہیں۔

Comments: 0

Your email address will not be published. Required fields are marked with *