چراغ پاسوان سے پارٹی کی صدارت بھی چھین لینے کی تیاری! پٹنہ میں اہم اجلاس طلب

چراغ پاسوان سے پارٹی کی صدارت بھی چھین لینے کی تیاری! پٹنہ میں اہم اجلاس طلب

رپورٹ کے مطابق اجلاس کے دوران چراغ پاسوان کے مقام پر پشوپتی کمار پارس کو پارٹی کا قومی صدر اور پارلیمانی بورڈ کا صدر بنایا جا سکتا ہے۔ اس کے لئے مجلس عاملہ کے ارکان سے رابطہ قائم کیا جا رہا ہے۔
نئی دہلی: لوک جن شکتی پارٹی میں جاری جنگ کے دوران بھتیجے چراغ پاسوان کو چچا پشوپتی کمار پارس کی طرف سے ایک اور زبردست جھٹکا دینے کی تیاری چل رہی ہے۔ این ڈی ٹی وی نے ذرائع کے حوالہ سے خبر دی ہے کہ چراغ پاسوان سے پارٹی کی صدارت بھی چھینی جا سکتی ہے۔ اس سے قبل ان سے پارٹی کے پارلیمانی بورڈ کے قائد کا عہدہ چھینا جا چکا ہے۔
رپورٹ کے مطابق پشوپتی کمار پارس اور دیگر پٹنہ جائیں گے اور جلد ہی پارٹی کی قومی مجلس عاملہ کا اجلاس طلب کریں گے۔ اس اجلاس کے دوران چراغ پاسوان کے مقام پر پشوپتی کمار پارس کو پارٹی کا قومی صدر اور پارلیمانی بورڈ کا صدر بنایا جا سکتا ہے۔ اس کے لئے مجلس عاملہ کے ارکان سے رابطہ قائم کیا جا رہا ہے۔
قبل ازیں، پیر کی دیر شام پشوپتی کمار پارس، چراغ پاسوان کی جگہ لوک سبھا میں ایل جے پی کے قائم بن گئے اور اسپیکر اوم برلا نے اس کی توثیق بھی کر دی! پارٹی کے ارکان پارلیمنٹ محبوب علی قیصر کو نپشوپتی پارس کا نائب مقرر کیا گیا ہے، جبکہ چندن سنگھ کو پارٹی کا چیف وِپ مقرر کیا گیا ہے۔
خیال رہے کہ لوک جن شکتی پارٹی کے 6 میں سے 5 ارکان پارلیمنٹ پارٹی کے صدر اور رکن پارلیمنٹ چراغ پاسوان سے بغاوت کر کے اپنی راہیں جدا کر چکے ہیں۔ بغاوت کرنے والے ارکان پارلیمنٹ پشوپتی کمار پارس، چندن سنگھ، پرنس راج، وینا دیوی اور محبوب علی قیصر ہیں۔
چراغ پاسوان کو پارٹی سے دور کرکے باغی لیڈران کو امید ہے کہ بہار حکومت میں ان کی پارٹی کی ساکھ اس سے مضبوط ہو سکتی ہے۔ پارٹی کا فی الحال کوئی رکن اسمبلی نہیں ہے لیکن آنے والے وقت میں قانون ساز کونسل کے راستے کسی لیڈر کو رکن نامزد کرائے جانے کی توقع ہے۔ وہیں پشوپتی کمار پارس کو مرکز میں وزارت کا عہدہ حاصل ہونے کا بھی امکان ہے۔

Comments: 0

Your email address will not be published. Required fields are marked with *